جگر گوشے

ویڑرز نے کھانے کی ڈشزز کے کور ایک زوردار آواز کے ساتھ ہٹائے،یہ گویا کھانا شروع ہونے کا عندیہ تھا۰تمام لوگ تیزی سے کھانے کی جانب لپکے،جیسے ایک لمحے کی کوتاہی انہیں مالِ غنیمت سے محروم کر دے گی۔ایک عجیب افراتفری کا سماں تھا،سوٹڈ بوٹڈ لوگ کچھ دیر کے لئے آدابِ محفل سے غافل نظر آرہے تھے۰ویٹرز دوڑ دوڑ کر ڈشزز کو دوبارا بھرنے میں مصروف تھے۔
میں اپنے آفس کولیگ کی بیٹی کی رخصتی میں مدعو تھا،تنہا آنے کی وجہ سے ایک کارنر ٹیبل پر بیٹھا رش چھٹنے کا منتظر تھا۰مجھے معلوم تھا کہ کھانا وافر مقدار میں موجود ہےاور کچھ دیر بعد میں سکون سے لے سکوں گا۔میری نظریں اسٹیج پہ بیٹھی دلہن پہ جمی ہوئیں تھیں جو کافی دیر سے سر جھکائے آنسو بہانے میں مصروف تھی۔اسُکی آنکھوں میں جیسے برسات کی جھڑی لگی تھی،ہچکیاں تھیں کہ تھم کر ہی نہیں دے رہیں تھیں ،ماں ،بہن اور چھوٹا بھائی نم آنکھوں سے اُسے چپ کرانے اور تسلی دینے کی ناکام کوششوں میں مصروف تھے-میرا کولیگ اُفسردہ چہرہ لئیےمہمانوں کو کھانے پر مدعو کرنے اور سسرال والوں کی نازبرداریوں میں لگا ہوا تھا۰کہیں کوئی کمی نہ رہ جائے،کوئی ناراض نہ ہو جائے،کسی کو کوئی بات بری نہ لگ جائے،،،،،ویٹر یہاں گرم روٹی لاؤ جلدی،،،،،،اُس نے بھاگتے ہوئے ویٹر سے کہا۔
کیا نظامِ قدرت اور کیا نظامِ زمانہ ہے،،،،
ہم اپنے باغ کی ننھی ننھی کونپلوں کو اپنا خونِ جگر دے کر بڑا کریں اور پھر اُنہیں کسی اور کا چمن مہکانے کے لئیے ہمیشہ ہمیشہ کے لئیے رخصت کر دیں ۔ہمارے آنگن کی چڑیائیں کسی اور کے صحن میں چہچہاہیں،،،،ہمارے گھروں کو سُونا کر کے کسی اور کے دریچوں کی رونقیں بڑھائیں ،،،،ہمارے دلوں کے گوشے،،،،ہمارے چمن کے پھول کسی اور کے آشیانوں کو مہکائیں اور خوشیوں سے آراستہ کریں !!!!!
یار بریانی تو صرف مٹن کی ہی اچھی بنتی ہے،میرے سامنے بیٹھے صاحب نے چکن لیگ پیس پر ہاتھ صاف کرتے ہوئے اپنے ساتھی سے فرمایا۔جسکی انکے ساتھی نے سر ہلا کر تائید کی۔
میں نے ایک افسوسانہ نظر اُن پہ ڈالی اور پلیٹ اُٹھا کر ٹیبل کی جانب بڑھ گیا۔ٹائم کافی ہو گیا تھا اور اپنی بیٹی کی فرمائش پہ مجھے آئسکریم لے کے گھر جانا تھا۔مجھے معلوم تھا کہ وہ میرے انتظار میں جاگ رہی ہوگی۔اُسکا خیال آتے ہی میرے چہرے پہ مُسکراہٹ بکھر گئی،،،الله تمام بچیوں کا نصیب اچھا کرے،،،میرے کانوں میں ایک صاحب کی آواز آئی،،،میں زیرِ لب آمین کہتا آگے بڑھ گیا۔
(ابنِ آدم)

Advertisements
This entry was posted in جگر گوشے. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s