Author Archives: ابنِ آدم

حاصل زیست

آج بھی میں پتھر ہوئی آنکھیں لیئے بستر پہ لیٹا کروٹیں بدل رہا تھا ، نیند جیسے روٹھ سی گئی تھی، بہت جتن کئیے پر نیند کی دیوی کو منا لینا جیسے اب میرے بس میں نہیں تھا۔ رات کے … Continue reading

Posted in حاصلِ زیست | 1 Comment

لفظ تھے کہ نشتر

رات کے اس پچھلے پہر نیند جیسے اسکی آنکھوں سے روٹھ گئی ہو۔کسی پل اُسے چین نہیں آرہا تھا،اک بےکلی،اک بے چینی جس میں اسکا وجود نڈھال ہوا جا رہا تھا۔سر بوجھ سے پھٹا جا رہا تھا۰۰۰۰۰آنکھیں تھیں کہ جیسے … Continue reading

Posted in Uncategorized | 1 Comment

ایک دن سب نے داستان ہو جانا ہے

قبر پہ مٹی ڈال کر میں ہاتھ جھاڑتا ہوا ذرا فاصلہ پہ چلا آیا۔جنازے میں کافی لوگ شامل تھے۔کچھ خاموش،افسردہ کھڑے مرحوم کو یاد کر رہے تھے۔کچھ دبی آواز میں فیملی مسائل پہ بات کر رہے تھےاور کچھ آس پاس … Continue reading

Posted in ایک دن سب نے داستاں ہو جانا ہے, ایک دن سب نے داستاں ہوجانا ہے | 2 Comments

کوئی ایک۰۰۰۰۰۰

نومبر کے اوائل کی ٹھنڈی سرد ہوا جیسے میرے تھکے ہوئے وجود کو جِلا بخش رہی تھی۔ہر طرف ایک خاموشی،،،،ایک سکون،،،،، پتوں کی سرسراہٹ بھی صاف سنی جارہی تھی،،،،،صاف نیلا آسمان، جیسے کسی ماں کا آنچل جس کی چھاؤں نے … Continue reading

Posted in Uncategorized | Leave a comment

الفاظ زباں نہیں مگر بے زباں نہیں

کسی نےپوچھامجھ سےکہ”اےابنِ آدم،تم اتنی گہرائی میں کیسےلکھ لیتےہو؟؟؟”                                                                 … Continue reading

Posted in ‎الفاظ زباں نہیں، پر بے زباں نہیں | Leave a comment

سرد کافی

  آج موسم کے تیور صبح ہی سے بہت برہم تھے،،،،،تیز موسلہ دھار بارش کے بعد ہر طرف جل تھل ہو رہا تھا۔مسلسل وقفے وقفے سے بجلی کی کڑک کہ گویا آسمان سر پر آن گرا ہو!!! میں شہر کے … Continue reading

Posted in سرد کافی | 1 Comment

اِک انتظارِ مسلسل

       ٹرن۰۰۰ٹرن۰۰۰ٹرن،،،،، موبائل فون کی گھنٹی سُنتے ہی وہدیوانوں کی طرح فون کی جانب لپکی! جلدیمیںاسُکا گھٹنا بیڈ کےکونےسےٹکرایااوراسکےناتواںبوڑھےجسم میں  جیسے اک آگ سی بھرگئی– اُسنےبامشکل تمام اپنی چیخ دبائیاورسسکی لیتےہوئے ہونٹ سختی سےبھینچ لئیے،،،، درد پرقابو پانےکی کوشش کرتے ہوئے موبائل فون  اُٹھایا مگرلائنکٹ چکی تھی–اُسنے بےچینی سےکاللاگ  چیک کیاورایک ٹھنڈا سانس لیتےہوئےموبائلاک طرف رکھ دیا،،، فونکمپنیکیجانبسےشایدکوئیپروموشنکالتھی–                 پچھلےکئی دنوں سے اُسےاپنی بیٹی کےفون کا شدت سےانتظار تھا– ویسےہی عید میں چند دن باقی تھےاورآخری عشرےکی  عبادات میں وہ اُسےبہت یاد کررہی تھی– نہجانےوہاگلا رمضان دیکھ پائےیا نہیں؟ بہت روئی تھی وہ اس بار۰۰۰۰۰    آج وہ سحری کے بعد سےلال آنکھیں لئیےجاگ رہی تھی– تین گھنٹے پہلے،ٹائم کاحساب کرتےہوئےاُسنےاپنی  بیٹی کو فون کیا تو وہ” بہت مصروف“ تھی،،،، ویسےبھی دوسرے ممالک میں رمضان کا کوئیخاصاہتمام نہیںہوتا، اُسکاخاوندآفس جارہاتھااوربچےاسکول کی تیاری میں مصروف،،،، “امی میںآپکوکچھدیرمیں فونکرتیہوں،،،،،” بس جب سےہی وہانتظارمیں ٹہل ٹہل کرہلکان ہو رہی تھی– بےچاری میری بچی،،،کتناکام کا لوڈاسپر،،، میاں،،،،بچے،،،ساس،،،سسر،،،، یقیناً تھک کراسکیآنکھلگ گئیہوگی،اُسنے … Continue reading

Posted in اِک انتظارِ مسلسل | Leave a comment

پھول،بارش اور سمندر

     ڈھلتے سورج کی کرنیں مانند سی پڑ گئی تھیں،ہر طرف نارنجی روشنی کا ڈیرہ تھا۰ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا،جیسے وجود کو ایک توانائی بخش رہی تھی۰میں چُپ چاپ بیٹھا کافی دیر سے اُسے سمندر کی نرم ریت پر خوشی سےنہال،اُچھلتے … Continue reading

Posted in پھول،بارش اور سمندر | 2 Comments

جدائی

        خاموشی اکثر کسی بڑے طوفان کا پیش خیمہ ہوا کرتی ہے۔ ہم دونوں بڑی دیر سےخاموش پارک کی اس بنچ پر بیٹھے ایک دوسرےسے نظریں چُرائے اپنے اپنے خیالوں میں گُم تھے۔میں اُس کے اس طرح … Continue reading

Posted in جدائی | 2 Comments

اُداسیوں کے رنگ

       ڈھلتی جنوری کی اس سرد صبح میں بارش کے بعد جیسے موسم میں اک سحر سا پھونک دیا گیا تھا،ہر طرف اک لطیف سی خنکی جیسے کسی نے کاندھوں پر برف کے گالے رکھ دئیے ہوں۔ہر سو … Continue reading

Posted in اُداسیوں کے رنگ | 2 Comments

محبت جیت جاتی ہے

ہلکی ہلکی بوندا باندی نے جنوری کی اس سردصبح میں کچھ اور خنکی گھول دی تھی-ہر طرف گہری دُھند کا راج تھا-سورج لاکھ کوششوں کے باوجود اس دبیز دھند کا پردہ چاک کر اپنا جاہ و جلال دکھانے سے قاصر … Continue reading

Posted in محبت جیت جاتی ہے | 5 Comments

چاہت کی قندیلیں

جاتے دسمبر کی یخ بستہ رات کے آخری پہر میں بھی نیند میری آنکھوں سے کوسوں دور تھی-ہر طرف اک اداسی،اک سوگواری،اک سناٹا، اک خاموشی کا راج تھا-اتنا سناٹا کہ گھڑی کی ٹک ٹک کی گونج مجھے دوسرے کمرے سے … Continue reading

Posted in چاہت کی قندیلیں | 4 Comments

م۔محبت ع۔عشق

سُنو مجھے تم سے واقعی عشق ہے۰۰۰۰ کیا فرق ہے محبت اور عشق میں؟؟؟ ایک عجب سا سوال اور الجھن۰۰۰۰ وہ مجھے ایک ٹک تکتی رہی عشق محبت کی معراج ہے،،،عشق ایک ایسا جذبہ جو ہر کسی کو میسر نہیں،،عشق … Continue reading

Posted in م۔محبت ع۔عشق | 1 Comment

پانی

               میں نے ہتھیلی کی مدد سے اپنی پیشانی پر موجود پسینے کو صاف کیا،،ایک نظر آسمان کی طرف ڈالی اور پھر سے چل پڑا-پچھلے کئی دنوں سے موسم کے تیور غضبناک تھے-آسمان سے … Continue reading

Posted in پانی | 1 Comment

محبت بولتی ہے

      میں نے آہستگی کے ساتھ الماری کا دروازہ کھولا اور اندھیرے میں ٹٹول ٹٹول کر اپنی مطلوبہ اشیئا تلاش کرنے لگا- مجھے آفس سے دیر ہو رہی تھی،رات گھر میں مہمان تھے اور سونے میں کافی دیر … Continue reading

Posted in محبت بولتی ہے | 2 Comments

مانوس اجنبی

      No signals میں نے جھنجھلا کر موبائل گاڑی کے ڈیش بورڈ پر پٹخ دیا،،،،پچھلے آدھے گھنٹے سے میں فون کرنے کی کوششوں میں مصروف تھا مگر اس نیٹ ورک کو بھی آج ہی ڈاؤن ہونا تھا-میں ایک … Continue reading

Posted in مانوس اجنبی | 2 Comments

دل ہی تو ہے

        تیز گرم تپتی ہوئی سنگلاخ چٹانیں میرے پاؤں جھلسائے دے رہی تھیں،،،،،سورج جیسے حقیقتأ سوا نیزے پر اُتر آیا تھا۔میرا تمام جسم پسینے سے شرابور تھا۔مگر ابھی کچھ کام باقی تھا اور مجھے مزید ایک دو … Continue reading

Posted in دل ہی تو ہے | 4 Comments

“فَبِأَيِّ آلَاءِ رَبِّكُمَا تُكَذِّبَان”

میں نے چُندھائی ہوئی آنکھوں سے سورج کی سمت دیکھنے کی ناکام کوشش کی،،،مجھے لگ رہا تھا کہ سورج زمین کے قریب آگیا ہے،،،،،اتنی گرمی! ہر طرف آگ لگی ہوئی تھی،ہر ایک شخص بلبلایا سا پھر رہا تھا۔میں بڑے بڑے … Continue reading

Posted in Uncategorized | Leave a comment

پھسلتے لمحے

میں بستر پہ لیٹا بڑی دیر سے کروٹیں بدل بدل کر سونے کی ناکام کوششوں میں مصروف تھا۔جسم کا جوڑ جوڑ دُکھ رہا تھا اور نیند تھی کہ جیسے روٹھ ہی گئی ہو۔ آج کا دن بہت مصروف تھا،میں دن … Continue reading

Posted in پھِسلتے لمحے | 1 Comment

گہرے روگ،سنہرے لوگ

اپنا ہونے کے لئیے ساتھ ہونا ضروری نہیں۰۰۰ بعض اوقات تمام عمر ساتھ ساتھ چلنے والے،ایک ساتھ رہنے والے ،،،دراصل میں ایک دوسرے سے بہت دور ہوتے ہیں کہ تمام عمر وہ ایک دوسرے کو سمجھ ہی نہیں پاتے  ،،،،،، … Continue reading

Posted in گہرے روگ،سنہرے لوگ | 1 Comment

جگر گوشے

ویڑرز نے کھانے کی ڈشزز کے کور ایک زوردار آواز کے ساتھ ہٹائے،یہ گویا کھانا شروع ہونے کا عندیہ تھا۰تمام لوگ تیزی سے کھانے کی جانب لپکے،جیسے ایک لمحے کی کوتاہی انہیں مالِ غنیمت سے محروم کر دے گی۔ایک عجیب … Continue reading

Posted in جگر گوشے | Leave a comment

اُڑے جاتے ہیں لمحے زندگی کے۰۰۰۰

کہیں خوشی،کہیں غم،،یہ دنیا کا دستور ہے۰کوئی شادیانے بجا رہا ہوتا ہے توکوئی آنسو چُھپا رہا ہوتا ہے۔زمانے کے چکر میں کوئی پہیے کے اوپر خوشی سے نہال ہو رہا ہوتا ہے اور کوئی اِسی پہیے کے نیچے دبا زندگی … Continue reading

Posted in اُڑے جاتے ہیں لمحے زندگی کے | Leave a comment

ہوا نصیب بنایا،سفرلکھااُس نے

میں نے کمرے میں پھیلی نائٹ بلب کی ہلکی سبز روشنی میں آنکھیں پھاڑ پھاڑ کر گھڑی کی سوئیاں دیکھنے کی کوشش کی۔صبح کے چار بجنے والے تھے اور میری روانگی میں تقریباً چار گھنٹے اور باقی تھے۔نیند میری آنکھوں … Continue reading

Posted in ہوا نصیب بنایا، سفر لکھا اُس نے | 2 Comments

“یہ گذرتے پل”

شام کے سائے گہرے ہوچلے تھے،دن بھر کا تھکاماندہ سورج اپنی آب و تاب دکھانے کے بعد گھنے درختوں کے پیچھے ڈوبنے کو تیار تھا۔گذرتے وقت کا ہر اک پل اُسکی رعنائی اور جاہ و جلال میں کمی کر رہا … Continue reading

Posted in یہ گذرتے پل | Leave a comment

اپنا اپنا سفر۰۰۰۰اپنی اپنی جستجو

میں اوندھے منہ صوفہ پر پڑا،سنڈے مورنگ سے لطف اندوز ہونے کی ناکام کوششوں میں مصروف تھا۔رات کو دیر تک جاگنے اور ویک اینڈ انجوائے کرنے کے باعث تمام اہلِ خانہ نیند کی مہربان دیوی کی آغوش میں خواب و … Continue reading

Posted in اپنا اپنا سفر۰۰۰اپنی اپنی جستجو | 2 Comments

بارش میں گُھلتے آنسو

دل دہلانے والی آواز کے ساتھ بجلی چمکی اور میرے سامنے کا منظر منّور ہوگیا۔ میں دیکھ سکتا تھا ،آسمان سے تیزی سے ایک کے پیچھے ایک گرتی بارش کی بوندیں ۰۰۰۰۰ جیسےکسی ٹوٹی مالا کے موتی۰۰۰۰۰ ایک ساتھ گر … Continue reading

Posted in بارش میں گُھلتے آنسو | 5 Comments

محبت ہمسفر میری

آسمان کی وسعتوں میں اُڑتے آوارہ بادلوں کے ساتھ آنکھ مچولی کرتا چاند،کبھی کسی بادل کے پیچھے چھپ جاتا اور کبھی کسی بادل کے دامن سے جھانکتا۰۰۰اسُکی اس حرکت سے جیسے یادوں کےدریچے کُھلتے جا رہے تھے۰۰۰۰کسی کی شوخ و … Continue reading

Posted in محبت ہمسفر میری | 3 Comments

سفرِ رائیگاں

تالیوں کی تیز آواز میری سماعت پہ ہتھوڑوں کی طرح برس رہی تھی,مجھے ایسا لگ رہا تھا کہ جیسے سب لوگ مجھ پہ قہقہے لگا رہے ہوں، میں آنکھوں میں نمی لئیے،اپنے ساتھیوں کی پذیرائی بھری گفتگو سُن رہا تھا … Continue reading

Posted in سفرِ رائیگاں | 1 Comment

خالی کشکوم

بہت دیرسے میں ،اُس پارک میں درخت سے ٹیک لگائےاسکےسائےکو بڑھتےدیکھ رہا تھا۔ میرے دیکھتے ہی دیکھتے سورج لمبی مُسافت طے کرکےتیزی کےساتھ غروب ہونے کو بےتاب تھا۔پرندے دن بھر کی تگ و دو کے بعداپنے اپنے گھونسلوں کی طرف … Continue reading

Posted in خالی کشکول | Leave a comment

فنا مقّدر ہے۰۰۰۰

سیڑھی اُترتے ہوئے میرے قدم لڑکھڑا گئے،میں گرتے گرتے بچا اور بامشکل تمام ریلنگ کو تھام سکا۔میری آنکھوں میں تیرتی نمی نے ویژن کو دھندلا دیا تھا۔میں نے شرٹ کی آستین سے آنکھیں رگڑ کر صاف کرنے کی ایک ناکام … Continue reading

Posted in فنا مقّدر ہے | Leave a comment

سالِ نو

‎سمندر کی ننھی ننھی بوندیں دسمبر کی اوس میں مل کر ماحول کو اور بھی نم بنا رہی تھیں۔ہر طرف ایک خوشگوار سی خنکی چھائی ہوئی تھی۔دسمبر کے ڈھلتے سورج کی نارنجی کرنیں اسُکی اداسی کا بھید کھول رہی تھیں … Continue reading

Posted in سالِ نو | Leave a comment

تم ۰۰۰میں ۰۰۰اور۰۰۰دسمبر

ہمارے قدموں تلے چرچراتے خشک پتے اس ویراں سڑک کی خاموشی توڑنےکی ناکام کوششوں میں مصروف تھے۔صبح کے اِس سمے ہر طرف گہری اور دبیز دھند کا راج تھا۔ایسا لگتا تھا کہ بادل فلک سےزمیں کو بوسہ دینے اُتر آئے … Continue reading

Posted in تم،میں اور دسمبر | 3 Comments

ایک شام،ایک سوچ اور میں

میں نے کلائی پہ بندھی گھڑی پر نظر ڈالی۰۰۰مجھے واقعی گھبراہٹ ہونے لگی۰۰۰میں فلائٹ تقریباًمِس کر چکا تھا۰۰۰۰ میں ایک مختصر سے آفیشل ٹور کے بعد گھر کی طرف رواں دواں تھااور دوبئی کے مصروف ترین انٹرنیشنل ایئر پورٹ سے … Continue reading

Posted in ایک شام،ایک سوچ اور میں | Leave a comment

A long drive

اب اُٹھ بھی جائیے،،،بیگم نے تیسری بار کمرے میں آکر کہا۰۰۰۰چھٹی کا دن تھا اور ہمیشہ کی طرح ہم دونوں اپنے اپنے محاذ پر ڈٹے ہوئے تھے۰۰۰میری کوشش ہوتی کہ چھٹی کا دن گھر میں آرام و سکون سے گذارا … Continue reading

Posted in A long drive | 1 Comment

تنہائی کا دکھ گہرا تھا

اُس نے دونوں ہاتھوں سے منہ دبا کر کھانسی کی آواز دبانےکی ناکام کوشش کی مگر اس کوشش میں اُسکا دم گھُٹنے لگا اور وہ بری طرح ہانپنے لگی۔ساتھ کے کمرے سے بہو ،بیٹے کے ہنسنے کی آوازیں آرہی تھیں۔اُسکی … Continue reading

Posted in تنہائی کا دکھ گہرا تھا | 1 Comment

بے لوث محبتیں

اچانک آہٹ کی آواز سے میری آنکھ کُھل گئی۰۰۰۰کمرے میں گھُپ اندھیرا تھا۰۰۰۰کوئی باہر گیا تھا۰۰۰۰یہ میرے ابو تھے جو اےسی کی کولنگ کم کر کے نکلے تھے۰۰۰۰چند دنوں سے میری طبیعت کچھ ناساز تھی۰۰۰مگر میں اپنی عادت سے مجبور … Continue reading

Posted in بے لوث محبتیں | Leave a comment

چُنے ہوئے لوگ

میں نے زور سے ہارن پر ہاتھ رکھا اورمسلسل بجاتا ہی چلا گیا۰۰۰۰گاڑی کے سامنے موٹر سائیکل سوار سامنے سے ہٹنے کو تیار نہیں تھا۰۰۰۰مجھ پر جھنجھلاہٹ سوار ہونے لگی۰۰۰بالآخر موٹر سائیکل سوار مجھے بری طرح گھورتا ہوا ایک سائیڈ … Continue reading

Posted in چُنے ہوئے لوگ | Leave a comment

حاصلِ زیست

اُس نے دھواں اُڑاتی کافی کا ایک گہرا سِپ لیا اور اپنے خوبصورت ہونٹوں پر زبان پھیرتے ہوئے مجھے مُسکرا کر دیکھا۰۰۰میں نے بھی جواباً اپنے ہونٹوں کو پھیلا کر اسُکی حسین مُسکراہٹ کا خندہ پیشانی سے خیر مقدم کیا۔ … Continue reading

Posted in حاصلِ زیست | 2 Comments

بےنام تعلق

ایک سرد ہوا کا جھونکا میرے چہرے سے ٹکرایا اور میں چونک کر اپنے خیالات کی دنیا سے باہر آگیا۰۰۰۰پتہ نہیں میں کب سے اپنی سوچوں میں گم تھا۰۰۰۰۰میرے سامنے رکھی چائے سرد ہوچکی تھی ۰۰۰۰شام کے سائے گہرے ہو … Continue reading

Posted in بےنام تعلق | 1 Comment

“شہرِ خموشاں”

“شہرِ خموشاں” قبر پر مٹی ڈالنے کے بعد میں ہاتھ جھاڑتے جھاڑتے رُک گیا،مجھے کہیں پڑھی ہوئی عبارت یاد آگئی۰۰۰۰”دیکھ انسان تیری اوقات،،،لوگ تجھ پر مٹی ڈالنے کے بعد،،،ہاتھ بھی تجھ پہ جھاڑیں گے۰۰۰۰۰۰” ایک لمحے کے لیئے میں کانپ … Continue reading

Posted in شہرِ خموشاں | Leave a comment

توبہ

اِک سرد ہوا کا جھونکا میرے آنسوؤں سے شرابور چہرے سے ٹکرایا اور مجھے اس فانی دنیا میں واپس لے آیا۰۰۰۰ میں مسجد کے ستون سے ٹکا بیٹھا تھا۰۰۰۰۰رمضان کی ستائیسویں شب اور ختمِ قرآن کی دل افروز محفل کے … Continue reading

Posted in توبہ قبول ہو۰۰۰۰ | Leave a comment

کھل جا سِم سِم

برداشت ایک طلسماتی طاقت۰۰۰۰۰ایک دیومالائی جذبہ۰۰۰۰۰۰اک ایسا جادو جو ہمیشہ سر چھڑ کر بولتا ہے۰۰۰۰۰ایک ایسامنتر جو کھل جا سِم سِم کی طرح ہمارے لئیے محبتوں اور چاہتوں کے دروازے کھول دیتا ہے۰۰۰۰۰۰ہمارے تمام مسائل اور مشکلات کا حل۰۰۰۰۰ایک ایسا … Continue reading

Posted in برداشت ایک طلسماتی طاقت | Leave a comment

احساس کے رشتے

تمام دن کا تھکا ہارا سورج،اپنا جاہ و جلال لٹانے کے بعد،اختتامِ سفر پر گامزن۰۰۰میرے چاروں طرف اک عجب سی خاموشی چھائی ہوئی تھی۰۰۰میرے پیروں تلے سمندر کی نرم و گیلی ریت،اک عجب سا سرور دے رہی تھی۰۰۰تازگی کا احساس … Continue reading

Posted in احساس کے رشتے | 4 Comments

ہر پل ہے زندگی

میری سمجھ میں نہیں آتا۰۰۰۰۰آخر زندگی ہے کیا؟؟؟؟ میں نے اُلجھے اُلجھے لہجے میں اُسکی طرف دیکھ کر کہا۰۰۰ وہ چائے کی پیالی میں چینی ملاتے ملاتے رُک گئی۰۰۰۰۰ مجھ پر گہری نظر ڈالی اور آہستہ سے بولی۰۰۰۰۰ زندگی کا … Continue reading

Posted in ہر پل ہے زندگی | 1 Comment

“کیا اور کیوں”

کیا اور کیوں؟؟؟؟؟ یہ تین اور چار حروفی چھوٹے چھوٹے لفظ ہی ہماری زندگی میں بہت بڑی اہمیت کے حامل! اگر ہم ہر کام کرنے سے پہلے اور یہاں تک کہ کرنے کے بعد بھی اپنے آپ سے یہ سوال … Continue reading

Posted in کیا اور کیوں | Leave a comment

“دکھاوا”

بعض اوقات ہم نہ چاہتے ہوئے بھی اپنے عمل اور باتوں سے دوسروں کی دل آزاری اور تکلیف کا باعث بن رہے ہوتے ہیں اور ہمیں اسکا گماں بھی نہیں ہوتا۰۰۰۰۰۰ دکھاوا اور شو بازی۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰ ہمارے معاشرے میں سرائیت کر … Continue reading

Posted in دکھاوا | 4 Comments

“انا”

” انا ” صرف تین حروف مگر انکا اثر۰۰۰۰۰انکی طاقت کا اندازہ لگانا بہت مشکل۰۰۰۰بڑے سے بڑے رشتے اور گہرے ناتے۰۰۰۰اس ایک جذبے کے آگے ریت کی دیوار۰۰۰۰جہاں یہ پروان چڑھ جائے۰۰۰وہاں سب کچھ تباہ۰۰۰۰برسوں کی محبتیں اور پیار لمحوں … Continue reading

Posted in موم دل۰۰۰پتھر لوگ | Leave a comment

“چند اندھیرے لمحات”

میں ہڑبڑا کر اُٹھ بیٹھا،،،،،،ہر طرف گھپ اندھیرا تھا اور مجھے کچھ سُجائی نہیں دے رہا تھا،،،،،،میں نے آنکھیں پھاڑ پھاڑ کر دیکھنے کی کوشش کی،،،،،مگر گھپ اندھیرے میں روشنی کی ہلکی سی رمق بھی نظر نہ آئی،،،،،مجھے اپنی سانس … Continue reading

Posted in چند اندھیرے لمحات | Leave a comment

“محبت آگہی ہے”

مجھے تم اور تمہاری محبت پر واقعی حیرت ہے۰۰۰۰وہ مجھے دیکھتے ہوئے بولی۰ مجھےاسکی سرمئی آنکھوں میں اپنے لئے رحم اور پریشانی کے ملے جلے جذبات نظر آئے۰۰۰ میں دھیرے سے مسکرا دیا….. محبت صرف پا لینے کا ہی تو … Continue reading

Posted in "محبت آگہی ہے" | Leave a comment

اپنوں کا درد

وہ دونوں بہت دیر سے خاموش تھے۰۰۰۰ایک ساتھ ہوتے ہوئے بھی ایک دوسرے سے بہت دور۰۰۰۰۰ بعض اوقات انسان ساتھ ہوتے ہوئے بھی دور اور بعض اوقات دوریاں بھی کوئی معنی نہیں رکھتیں ۰۰۰۰دور ہوکر بھی اک دوسرے سے بہت … Continue reading

Posted in اپنوں کا درد | 1 Comment

“ان کہی باتیں”

کچھ باتیں ان کہی رہنے دو…… کچھ باتیں ان کہی ان سنی اچھی! اُنکا حسن،انکا طلسم،انُکے نہ کہنے میں ہی پوشیدہ! اگر کہہ دیا جائے تو انُکا طلسم ٹوٹ جاتا ہےاور سننے والا جادوئی دنیا سے باہر آجاتا ہے،جس میں … Continue reading

Posted in ان کہی باتیں | 1 Comment

لوگ محبت کرنے والے”

اُس نے ترکش کافی کا تلخ گھونٹ حلق سے اُتارا اور بولا۰۰۰ بعض اوقات ہم اپنے ارد گرد سے بے خبر۰۰۰نا آشنا۰۰۰۰بےگانے اپنی زندگی میں مست۰۰۰اپنے آپ میں گم ہمیں اپنے اردگرد کے لوگ نظر ہی نہیں آتے۰۰۰ہم انکی چاہتوں … Continue reading

Posted in لوگ محبت کرنے والے | 7 Comments

اکِ جنوں بے معنی،اِک یقیں لا حاصل

زندگی کے ہر گذرتے پل کے ساتھ تشنگی بڑھتی ہی جارہی ہے،،ایک احساسِ لاحاصلیت”،،،سوچتا ہوں مقصدِ حیات کیا ہے اور کیا کرتا جاتا ہوں! انسانوں کے سمندر میں ایک قطرے کی مانند۰۰۰۰جو بہاؤ کے ساتھ بہنے پر مجبور ۰۰۰۰چاہتے ہوئے … Continue reading

Posted in میں کیا سوچتا ہوں | 3 Comments