Author Archives: ابنِ آدم

ایک دن سب نے داستان ہو جانا ہے

قبر پہ مٹی ڈال کر میں ہاتھ جھاڑتا ہوا ذرا فاصلہ پہ چلا آیا۔جنازے میں کافی لوگ شامل تھے۔کچھ خاموش،افسردہ کھڑے مرحوم کو یاد کر رہے تھے۔کچھ دبی آواز میں فیملی مسائل پہ بات کر رہے تھےاور کچھ آس پاس … Continue reading

Posted in ایک دن سب نے داستاں ہو جانا ہے, ایک دن سب نے داستاں ہوجانا ہے | Leave a comment

کوئی ایک۰۰۰۰۰۰

نومبر کے اوائل کی ٹھنڈی سرد ہوا جیسے میرے تھکے ہوئے وجود کو جِلا بخش رہی تھی۔ہر طرف ایک خاموشی،،،،ایک سکون،،،،، پتوں کی سرسراہٹ بھی صاف سنی جارہی تھی،،،،،صاف نیلا آسمان، جیسے کسی ماں کا آنچل جس کی چھاؤں نے … Continue reading

Posted in Uncategorized | Leave a comment

الفاظ زباں نہیں مگر بے زباں نہیں

کسی نےپوچھامجھ سےکہ”اےابنِ آدم،تم اتنی گہرائی میں کیسےلکھ لیتےہو؟؟؟”                                                                 … Continue reading

Posted in ‎الفاظ زباں نہیں، پر بے زباں نہیں | Leave a comment

سرد کافی

  آج موسم کے تیور صبح ہی سے بہت برہم تھے،،،،،تیز موسلہ دھار بارش کے بعد ہر طرف جل تھل ہو رہا تھا۔مسلسل وقفے وقفے سے بجلی کی کڑک کہ گویا آسمان سر پر آن گرا ہو!!! میں شہر کے … Continue reading

Posted in سرد کافی | 1 Comment

اِک انتظارِ مسلسل

       ٹرن۰۰۰ٹرن۰۰۰ٹرن،،،،، موبائل فون کی گھنٹی سُنتے ہی وہدیوانوں کی طرح فون کی جانب لپکی! جلدیمیںاسُکا گھٹنا بیڈ کےکونےسےٹکرایااوراسکےناتواںبوڑھےجسم میں  جیسے اک آگ سی بھرگئی– اُسنےبامشکل تمام اپنی چیخ دبائیاورسسکی لیتےہوئے ہونٹ سختی سےبھینچ لئیے،،،، درد پرقابو پانےکی کوشش کرتے ہوئے موبائل فون  اُٹھایا مگرلائنکٹ چکی تھی–اُسنے بےچینی سےکاللاگ  چیک کیاورایک ٹھنڈا سانس لیتےہوئےموبائلاک طرف رکھ دیا،،، فونکمپنیکیجانبسےشایدکوئیپروموشنکالتھی–                 پچھلےکئی دنوں سے اُسےاپنی بیٹی کےفون کا شدت سےانتظار تھا– ویسےہی عید میں چند دن باقی تھےاورآخری عشرےکی  عبادات میں وہ اُسےبہت یاد کررہی تھی– نہجانےوہاگلا رمضان دیکھ پائےیا نہیں؟ بہت روئی تھی وہ اس بار۰۰۰۰۰    آج وہ سحری کے بعد سےلال آنکھیں لئیےجاگ رہی تھی– تین گھنٹے پہلے،ٹائم کاحساب کرتےہوئےاُسنےاپنی  بیٹی کو فون کیا تو وہ” بہت مصروف“ تھی،،،، ویسےبھی دوسرے ممالک میں رمضان کا کوئیخاصاہتمام نہیںہوتا، اُسکاخاوندآفس جارہاتھااوربچےاسکول کی تیاری میں مصروف،،،، “امی میںآپکوکچھدیرمیں فونکرتیہوں،،،،،” بس جب سےہی وہانتظارمیں ٹہل ٹہل کرہلکان ہو رہی تھی– بےچاری میری بچی،،،کتناکام کا لوڈاسپر،،، میاں،،،،بچے،،،ساس،،،سسر،،،، یقیناً تھک کراسکیآنکھلگ گئیہوگی،اُسنے … Continue reading

Posted in اِک انتظارِ مسلسل | Leave a comment

پھول،بارش اور سمندر

     ڈھلتے سورج کی کرنیں مانند سی پڑ گئی تھیں،ہر طرف نارنجی روشنی کا ڈیرہ تھا۰ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا،جیسے وجود کو ایک توانائی بخش رہی تھی۰میں چُپ چاپ بیٹھا کافی دیر سے اُسے سمندر کی نرم ریت پر خوشی سےنہال،اُچھلتے … Continue reading

Posted in پھول،بارش اور سمندر | 2 Comments

جدائی

        خاموشی اکثر کسی بڑے طوفان کا پیش خیمہ ہوا کرتی ہے۔ ہم دونوں بڑی دیر سےخاموش پارک کی اس بنچ پر بیٹھے ایک دوسرےسے نظریں چُرائے اپنے اپنے خیالوں میں گُم تھے۔میں اُس کے اس طرح … Continue reading

Posted in جدائی | 2 Comments